پہلے میری سوہنی دھرتی کا افسانہ سنا, پھر ستاروں، آسمانوں، جنتوں کی بات کر

خدا کرے میری ارضِ پاک پر اُترے
وہ فصلِ گُل جسے اندیشۂ زوال نہ ہو
یہاں جو پھول کِھلے وہ کِھلا رہے برسوں
یہاں خزاں کو گزرنے کی بھی مجال نہ ہو



میری طرف سے تمام اہلِ وطن اور خاص طور پر اراکینِ اردونامہ کو آزادی کی خوشیاں مبارک ہوں۔

اصل سائز میں زوم کریں: 850 x 315)عکس



آیئے اس دن کا عہد کریں کہ عرضِ پاک کی طرف اٹھنے والی ہر نگاہِ غلط کو مٹی میں ملا کر دم لیں گے۔ وطنِ عزیز کے گوشوں میں اٹھنے والے نفرت کے طوفانوں کے رخ موڑ دیں گے۔ آیئے ہم یہ عہد کریں کے عالم اسلام کی قوت سے خوفزدہ کفار کی سازشوں کو ناکام بنادیں گے۔مسلمان کو مسلمان سے لڑانے کی تمام کوششوں کا گلا گھونٹ دیں گے۔

پڑھناجاری رکھئے…